● بہاروں پھول برساو

● بہاروں پھول برساو

ایک طرف شبنمی قدموں کی خاموشی۔
اور دوسری طرف
پائنچوں میں چھپی نقرئی گفتگو کرتی پائل کی کھنک۔

کلیوں کا چٹکنا جیسا محبوب کے مسکاتے لب۔
ہر سو پھیلی پھولوں کی خوشبو، اور ہرجائی بھنوروں کا طواف۔

مٹیالے بادل سے ٹپکتی، ٹہرتی، لپکتی بوندیں
اور مٹی سے اٹھتی سوندھی خوشبو کی لپٹیں۔

اور
ڈھلتی خوبصورتی عمر گریزاں کے قصے سناتی ہوئی
لیکن
اب بھی دلکش ہے تیرا روپ اے دلربا، اے دلنشیں۔

،صندلی بانہیں، مخملی نگاہیں اور اداسی سے لبریز لرزتے کپکپاتے ہونٹ
،چہرے پر لٹکتی بے پرواہ چاندی کے تار چھپائے زلفوں کی لٹیں
آواز وہی جیسے ہر تان ہے دیپک۔

○ جاوید اختر

Published by

akhterjawaid

Freelancer and blogger

Leave a Reply

Please log in using one of these methods to post your comment:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s